حالاتِ حاضرہ لائف اسٹائل

دنیا بھر سے میٹھی عید کی میٹھی سوغاتیں

عید الفطر(میٹھی عید) رمضان کے بعد آنے والا تہوار ہے جو ماہِ رمضان میں روزے رکھنے والوں کے لیے اللہ کریم کے طرف سے دیا جانے والا ایک تحفہ ہے۔ عید کی آمد سے پہلے ہی عید کی تیاریاں عروج پر ہوتی ہیں کپڑوں سے لے کر تمام گھر کی تزئین و آرائش تک ہر چیز کا خاص خیال رکھتے ہوئے تیاری کی جاتی ہے۔ ان ساری تیاریوں میں جو چیز خاتونِ خانہ کے لیے بہت زیادہ اہمیت کی حامل ہوتی ہے وہ عید کے دن بننے والے پکوان ہیں اور کھانوں میں جو مقام میٹھی ڈش کو حاصل  ہے وہ سب ہی جانتے ہیں۔

جیسے کے اس عید کے نام سے ہی ظاہر ہے کہ یہ میٹھی تو  میٹھی میٹھی  سوغاتوں سے بھرپور ہوگی۔ دنیا بھر میں  مسلم ممالک اس عید کے لیے کچھ خاص میٹھی ڈشوں کا اہتمام کرتے ہیں جو اُن علاقوں کے لوگوں کی پسند کے مطابق ہے۔ ہم آج انھی مزیدار اور میٹھی میٹھی ڈشز  کے بارے میں جانیں گے جو دنیا بھر میں عید کے دن بنائی جاتی ہیں۔ ساتھ ہی ساتھ ان ممالک میں عید  کے کچھ مخصوص روایات کے متعلق معلومات  بھی فراہم کریں گے۔

افغانستان:

افغانستان میں عید کے موقع پر  مرد حضرات "تخم جنگی” کے نام سے ایک کھیل کھیلتے ہیں ( صرف مرد حضرات) ۔ اس کھیل میں وہ   اُبلے ہوئے انڈے ایک دوسرے پر پھینکتے ہیں۔ یہ قدیم روایات میں سے ایک روایت ہے۔ دیگر ایشیائی ممالک کی طرح افغانستان میں بھی  میٹھی ڈش کے طور پر تو  عید کے دن سویاں اور شیرخرما ہی مقبول ہے اور اس کے علاوہ "بولانی” نام کی ایک ڈش بھی تیار کی جاتی ہے جو بہت ہی مزیدار ہوتی ہے۔ یہ دراصل سبز پتوں والی سبزیوں، آلو ، کدو اور دالوں کو روٹی میں بھر کر بنائی جاتی ہے۔ یہ عید کے دن کی خاص ڈش تصور کی جاتی ہے۔

آسٹریلیا:

یہ دن آسٹریلیا میں عام تعطیل کا دن ہوتا ہے۔ اس دن مسلمان اور غیر مسلم سب مل کر ایک گیٹ ٹو گیدر کا اہتمام کرتے ہیں۔ اس دن طرح طرح کے کیک اور مٹھائیاں بنائی اور کھائی جاتی ہیں۔

برو نائی دارالسلام:

برو نائی  میں لوگ عید کے موقع پر تحائف کا تبادلہ کرتے ہیں ، ایک دوسرے  کے گھر جاتے ہیں ۔عید کے موقع پر "کیٹوپٹ اور  ڈمپلنگ” کے  نام سے مشہور ڈشیں  بنائی جاتی ہیں۔  کیٹوپٹ چاول کی خاص ڈش ہے جو براؤن پیاز اور  کھیرے کے ساتھ پیش کی جاتی ہے اور ڈمپلنگ (حلوا) گڑ،ناریل کے دودھ اور چاول کے آٹے سے بنائی جاتی ہے جو کہ  پام کے پتوں میں ڈائمنڈ کی شکل میں لپیٹ کر  بنائی اور پیش  کی جاتی ہے۔

برما:

برما میں سوجی سے بنی میٹھی ڈش بنائی جاتی ہے ۔ اس کے علاوہ برما میں عید کے دن مخصوص بریانی بنائی جاتی ہے  جس میں میووں اور گوشت کی ایک خاص (اضافی) مقدار شامل کی جاتی ہے۔

چین:

چین میں مسلمان کم تعداد میں رہتے ہیں۔ مسلمان  آبادی عید کا تہوار بہت خوشی سے مناتی ہے۔ اس موقع پر یہ لوگ "سید اجل ” کے مزار پر حاضری دیتے ہیں جو کہ یہاں کی مذہبی روایت ہے۔ "یو زیئنگ”  نام کی ایک ڈش بنائی جاتی ہے جو سوپ اور چاولوں کے ساتھ پیش کی جاتی ہے۔ یہ ایک آٹے سے بنائی جانے والی ڈش ہے جس کی خوشبو اتنی اچھی نہیں ہوتی۔

مصر:

مصر میں عید کا تہوار چار دن منایا جاتا ہے۔ اس دن مزیدار  روایتی انداز کی مچھلی تیار کی جاتی ہے۔ چاول، گوشت، پیاز کے امتزاج کے ساتھ یہ ڈش بہت لذیذ ہوتی ہے۔ میٹھے کے طور پر "کہک” نام کے ثقافتی انداز کے بسکٹ بھی عید کے دن کی مٹھاس میں اضافہ کرتے ہیں۔

انڈونیشیا:

انڈونیشیا میں عید کے دن لوگ سب سے پہلے قبرستان جاتے ہیں۔ وہاں مرحومین کے لیے دعائے خیر کرتے ہیں۔ وہاں موجود قبور کی صفائی کرتے ہیں۔ یہ عید کے دن کا نماز کے بعد کیا جانے والا پہلا عمل ہوتا ہے۔ انڈونیشیا میں حلوہ عید کے دن کی خاص ڈش میں شمار کیا جاتا ہے۔ یہ انڈونیشین انداز کا مزیدار حلوہ  ہوتا ہے جو میووں اور گھی سے بنایا جاتا ہے ۔ اس کے علاوہ ایک ڈش "کیو لیپس لیگٹ” بھی بنائی جاتی ہے جو  thousand layer cake سے ملتی جلتی ایک سوئٹ ڈش ہے جو بہت مقبول اور نہایت ہی مزیدار بھی ہے۔ اس میں مکھن ،مسالوں اور میدے کا ایک خاص امتزاج ہوتا ہے جو اسے اور ڈشز سے منفرد بناتا ہے۔

ترکی:

ترکی میں عید کا دن "سکر بیرامی ” کہلاتا ہے اس کے معنی بھی "میٹھی عید” کے ہیں۔ اس دن سب لوگ ایک دوسرے سے محبت اور احترام کا اظہار  کرتے ہیں اور ملتے وقت ایک دوسرے کے ہاتھ کی پشت پر بوسہ دیتے ہیں۔ بچے اپنے پڑوسیوں کے گھر جاتے ہیں۔ بڑے اپنے دوست احباب اور رشتے داروں کے گھر تحائف لے کر جاتے ہیں۔ ترکی میں عید کے دن ٹرکش ڈیلائٹ "بکلاوہ”خصوصی طور پر بنائے جاتے ہیں۔ بکلاوہ اب تقریبا تمام ممالک میں پسند کی جانے والی ترکی سوغات ہے۔

ملائشیا اور سنگاپور:

ملائشیا اور سنگا پور میں بھی برونائی اور انڈونیشیا کی طرح ہی عید منائی جاتی ہے اور ان کی ڈشز بھی کم و بیش ایک جیسی ہیں۔ ان دونوں ممالک میں بھی کیٹو پٹ ،اور ڈمپلنگ حلوہ خاص اہمیت کا حامل ہے اس کے ساتھ ساتھ عید کے دن گوشت کے سالن اور ڈوڈل بھی بنائی جاتی ہے۔ڈوڈل گڑ ،آٹے، بادام اور کوکونٹ ملک سے بنائی جانے والی مزیدار ڈش ہے۔

عراق:

عراق میں کھجور رمضان کے ساتھ ساتھ عید کے دن بھی بہت اہم تصور کی جاتی ہے۔ عراق میں عید کے دن کلیچہ بنائے جاتے ہیں جو بہت پسند کیے جاتے ہیں یہ دراصل کھجور اور میووں بھرے بسکٹ ہوتے ہیں جن پر عرق گلاب چھڑکا جاتا ہے۔

سعودیہ عرب:

سعودیہ عرب میں عید روایتی انداز میں مذہبی جذبے سے منائی جاتی ہے۔ اس دن عرب اپنے گھر کے باہر دری یا چادر بچھا کر بیٹھ جاتے ہیں اور اپنے پڑوسیوں اور دیگر کے ساتھ  مل کر عید مناتے ہیں۔ سب ایک ساتھ کھانا کھاتے ہیں، اپنے گھر کے کھانے آنے جانے والے لوگوں میں تقسیم کرتے ہیں۔ کھجور عرب میں بھی مقبول ہے۔

صومالیہ:

صومالیہ کا شمار غریب ممالک میں ہوتا ہے پر عید کے دن یہاں بھی روایت کے مطابق دسترخوان سجتا ہے۔  صبح نماز کے بعد سوئٹ ڈش "حلوہ” تناول کیا جاتا ہے۔ یہ میٹھا عید کی خصوصی ڈش ہے جو مکئی کے آٹے، مسالوں اور میووں سے تیار کیا جاتا ہے۔

موراکو:

موراکو میں "لاسیڈا”  اور” ٹیگائین” بنائی جاتی ہیں۔ لاسیڈا (لذیذہ) میٹھی ڈش ہے جو چاول کی پڈنگ سے ملتی جلتی ایک ڈش ہے۔ چاول کی جگہ خشخاش کا استعمال کیا جاتا ہے۔ عید کے دن کا آغاز لاسیڈا  کھا کر کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ ٹیگائین مرغی سے بنائی جانے والی ایک مصالحے دار ڈش ہے پر عید کے دن بیف اور مٹن ٹیگائین بھی بنائی جاتی ہے۔

جنوب مشرقی  ایشیا:

جنوب مشرقی ایشیا میں چاند رات والے دن بچے اپنے گھروں میں تیل کے چراغ جلاتے ہیں۔ خصوصی دعا ئے مغفرت کا اہتمام کیا جاتا ہے۔  عید کے دن جنوب مشرقی ایشیا کے ممالک میں بیف رینڈنگ بنائی جاتی ہے۔  لہسن، ادرک، پیاز، لیمن گراس و دیگرمصالحہ جات سے بھر پور یہ ڈش بہت مزیدار ہوتی ہے جو عید کے دن کے مزے کو دوبالا کر دیتی ہے۔

برطانیہ :

برطانیہ میں عید کے دن بریانی  کو  خاص اہمیت حاصل ہے۔ یہ بریانی گوشت کی چھوٹی بوٹیوں اور بہت تیز مصالحوں سے بنائی جاتی ہے۔

روس:

روس میں  بھی عید کا دن مذہبی جذبے سے منایا جاتا ہے۔ میٹھے میں انواع اقسام کے حلوے بنائے جاتے ہیں اس کے ساتھ ساتھ ایک مخصوص ڈش "منتی” بھی بنائی جاتی ہے جو بیف یا بھیڑ کے گوشت میں مصالحے  بھر کےبنائی جاتی ہے۔

یمن:

یمن میں عید اسلامی روایت کے ساتھ ساتھ ثقافتی انداز میں بھی منائی جاتی ہے۔ عید کا دن جیلی سے بنے میٹھے جو "اسیدہ” کہلاتا ہے کے بغیر نامکمل ہوتا ہے ۔یہ میٹھا میکسیکن فلین سے ملتی جلتی ایک ڈش ہے جس میں گندم اور شہد  کا استعمال کیا جاتا ہے۔  اسے گرم گرم پیش کیا جاتا ہے اس کے علاوہ "بنت الصحن "بھی ایک مشہور روایتی ڈش ہے جو   انڈے، میدہ، دودھ  اور مکھن سے گوندھے گئے آٹے پر شہد اور کلونجی سے سجاوٹ کر کے بنائی جاتی ہے۔

پاکستان انڈیا اور بنگلہ دیش:

پاکستان، انڈیا اور بنگلہ دیش میں عید منانے کی روایات کے ساتھ ساتھ عید کے کھانے بھی ایک جیسے ہیں ( تھوڑی بہت تبدیلی کے بعد)۔ تینوں ممالک میں عید کی تیاری رمضان کی آمد سے قبل ہی شروع ہو جاتی ہے۔ رمضان کے دوران عبادت کے ساتھ ساتھ عید کی تیاریاں بھی زوروں پر ہوتی ہیں۔  اس تیاری میں گھر کی صفائی ستھرائی، تزئین و آرائش، رنگ روغن سے لے کر ہر فرد کی انفرادی تیاری شامل ہوتی ہے۔ ایک رات پہلے چاند کی آمد سے ہی عید کا شور  ہو جاتا ہے، عبادت کی جاتی ہے، مٹھائی تقسیم کی جاتی ہے، لڑکیاں ہاتھوں پر مہندی لگاتی ہیں، گفٹ اور عیدی  پیک کی جاتی ہے، گھروں کی سجاوٹ کی جاتی ہے۔  رات سے ہی کھانوں کی آدھی تیاری مکمل کر لی جاتی ہے تاکہ صبح جلد سب کام مکمل ہو جائیں اور اپنوں میں مل بیٹھنے کا موقع ملے۔

صبح صادق سے ہی سب بڑے چھوٹے غسل کر کے نئے کپڑے زیب تن کر کے عطر لگا کر گھر میں بنی سویاں، شیر خرما یا سویوں کے زردے سے منہ میٹھا کر کے نماز کی ادائیگی کے لیے جاتے ہیں۔ واپسی میں اپنے مرحومین کی قبور پر جاتے،  سلام  و فاتحہ خوانی کرتے ہیں ( اس طرح اپنی خوشی میں اپنے پیاروں کو بھی یاد رکھتے ہیں )۔ پھر گھر آکر ناشتے میں بنے مزے مزے کے کھانے اور میٹھے تناول کر کے عید کی خوشیوں کا آغاز کرتے ہیں۔

پاکستان، انڈیا اور بنگلہ دیش میں عید کے دن میٹھائی، شیر خرمہ، دودھ سویاں، کھیر وغیرہ بنائی جاتی ہیں جن میں میووں   کا وافر مقدار میں استعمال اور مکھن یا دیسی گھی کا بگھار  ان کے مزے  کو دوبالا کر دیتا ہے۔

عید یا کسی بھی خوشی میں چار چاند تب لگتے ہیں جب ہم دل سے خوشی محسوس کریں۔  دل کو شاد اور مطمئن رکھنے کا سب سے بہترین ذریعہ دوسروں  میں خوشی تقسیم کرنا ہے۔ اپنی خوشی میں ان لوگوں کو بھی ضرور یاد رکھیں جو مجبور ہیں اور ان خوشیوں کے  مواقع پر  بھی انھیں منانے کی قدرت نہیں  رکھتے۔ اپنے آس پاس نظر دوڑائیں وہ لوگ جو سوال نہیں کرتے پر دل رکھتے ہیں ان کے لیے آسانی تقسیم کرنے کی اپنی سی کوشش کریں چاہے وہ کوشش چھوٹی ہی کیوں نہ ہو۔ ہم سب کی چھوٹی چھوٹی کوششیں بڑی تبدیلی لا کر سب کو عید کی خوشیاں دے سکتی ہیں۔

میری طرف سے آپ سب کو بہت بہت  عید مبارک

گل زہرہ طارق
گل زہرہ ترجمہ نویس اور بلاگر ہیں۔ سٹیزن آرکائیوز پاکستان سے منسلک ہیں۔ روزمرہ زندگی کے امور اور پلکے پھلکے موضوعات پر لکھنا پسند کرتی ہیں۔
http://[email protected]

اپنی رائے کا اظہار کیجیے